بنیادی صفحہ » آج کی دعا » عالم استعجاب

عالم استعجاب

عالم استعجاب

سلام صبح سورج کی کرنوں سے نور سحر کی جلاء باری چراتے آج کے دن کی روشنیاں آپکو نذر کرنے حاضر ہے قبول فرمائیں۔
حکمت الہی کے سلسلے عقل انسانی سے بالا ہیں اور غور و فکرکی سطح عالی کی لامحدود وسعتوں سے عجائبات کی رسائی تک حیرتوں کے جہان میں اتارنے کی سبیل کامل ہے۔
وسعت عالمین غور و فکر کی سبیلیں ہیں۔
زندگی کی روانی اپنے اطراف کی محدود نگاہ پر منحصر ہو کر رہ گئی ہے۔
چند ہدایات کو رٹتے ہوئے مکمل عمل سے بے نیاز پاکستان کے باسیوں کے عمل ناقص راستے کی رکاوٹ بنے پوری قوم کو زندگی کی راحتوں سے محروم کیئے جاتے ہیں۔
فکر فردا کا خوف حال کی خوشیوں سے محروم کیئے دیتا ہے۔ ماضی کا تاسف آج کے سکھ کو ہضم کیئے پشیمان بنا رہا ہے۔
دعائیں قبولیت سے خالی ہیں کیونکہ یقین کا فقدان قبولیت کی انرجی سے خالی ہے۔
آئے خدا اس ملک و قوم پر رحم فرما اور ہدایت کی دولت عطا فرما۔ حالات بہت مخدوش ہیں۔ انسان گھٹ گھٹ کر جی رہے ہیں اور تڑپ تڑپ کر مر رہے ہیں۔
اس سیاہ رات کی سحر دور تک دکھائی نہیں دئے رہی۔
قیامت قریب ہی نہیں آ چکی ہے۔
رحم فرما میرئے خالق و مالک۔
دعائے رباب آپکو منزل کمال تک رسائی کی معاون ثابت ہو
الہی آمین
روحانی سکالر عارفہ شاعرہ مصنفہ کالم نگار
طاہرہ رباب الیاس ہیمبرگ جرمنی

تعارف: Admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

نور ثبات عالم

نور ثبات عالم سلام صبح گنجینہء رحمت و برکت لیئے نمودار ہوا تو سلام کی ...