بنیادی صفحہ » ادب » ایسا نہ ھو خدا سے جب اپنا حساب لُوں– تب یہ پتہ چلے کہ قیامت تمام شُد

ایسا نہ ھو خدا سے جب اپنا حساب لُوں– تب یہ پتہ چلے کہ قیامت تمام شُد

ھم تُم تمام شُد تو محبّت تمام شُد
حیرت کدَہِ عشق سے ،حیرت تمام شُد

اُڑنا سِکھا دیا ھے تمھارے جمال نے
اب تنگیِ خیال کی فُرصت تمام شُد

اشکوں پہ منحصر ھے وہ کُچھ کہہ سکیں اگر
مجھ میں تو عرضِ حال کی ھمّت تمام شُد

اخبار نہ ھُوا کوئی کشکول ھو گیا
پیسے مِلے تو عجزِ صحافت تمام شُد

جاتا ھُوں اُس گلی میں مُجھے روک کر دِکھا
اے ھجر آج سے تری بیعت ، تمام ُشد

ایسا نہ ھو خدا سے جب اپنا حساب لُوں
تب یہ پتہ چلے کہ قیامت تمام شُد

للکارتا ھُوں چاروں طرف دشمنوں کو مَیں
نرغے میں گِھر گیا ھُوں تو دھشت تمام شُد

عورت کی ننگی لاش تھی ڈھانپی نہیں گئی
عُریاں بدن کو دیکھ کے۔۔۔۔۔۔ غیرت تمام شُد

اُس نے کہا کہ جا ! مَیں اُٹھا، اور دِیا بُجھا
جو رَہ گئی تھی باقی وُہ عزّت تمام شُد

ھکلا رھا تھا دیکھ کے ظلم و ستم کو مَیں
چیخا ھُوں اتنے زور سے ، لُکنت تمام شُد

بیٹے نے میرے بعد وصیّت مری پڑھی
"اک خوابِ لامکاں پہ وراثت تمام شُد”

جاتا ھُوں دشمنوں کی طرف ڈھونڈنے اُسے
ھے شہرِ دوستاں میں مروّت تمام شُد

سر پر خود آ گِرا ھے کرائے کا یہ مکان
لگتا ھے اب مکینوں کی غُربت تمام شُد

روتی ھزار سال طبیعت مری مگر
دو چار آنسووں سے مصیبت تمام شُد

صدیاں گُزر گئی ھیں ترے انتظار میں
اے مرگِ ناگہاں ! مری طاقت تمام شُد

جب مَیں نے ڈھال پھینک دی دستِ یقین سے
تُم کہہ رھے ھو دورِ شہادت تمام شُد

سائے پہ کیا غرور کرے کوئی دوستو
سُورج ھُوا غروب تو قامت تمام شُد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رفیع رضا۔۔

تعارف: Admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

بھیگے پَل سے سورج کا اغوا ،، تک کا سفر: (فرخندہ رضوی خندہ ؔ )

مصنف ( سرور ظہیر غزالی ) برلن (جرمنی) اظہار خیال (فرخندہ رضوی خندہ ؔ )برطانیہ ...