بنیادی صفحہ » شعر و سخن » قسم ہے آپ کی یاں نقدِ جاں تک بات آپہنچی

قسم ہے آپ کی یاں نقدِ جاں تک بات آپہنچی

سیّد کامران زبیر کامیؔ

جنونِ عشق میں سوزِ نِہاں تک بات آپہنچی
قسم ہے آپ کی یاں نقدِ جاں تک بات آپہنچی

وہ اکثر دیکھتے ہیں بادلِ ناخواستہ مجھ کو
نصیبِ دشمناں یارو! یہاں تک بات آپہنچی

نہیں الفت رہی اُن کو مرے ٹوٹے ہوئے دل سے
بیاں کیا کیجئے زخمِ زیاں تک بات آپہنچی

سجا رکھی ہے اک تصویر میں نے دل کے آنگن میں
شبِ ہجراں لگا خالی مکاں تک بات آپہنچی

خدا معلوم کب کیسے یہاں عمرِ رواں لائی
سکونِ زندگی، کارِ جہاں تک بات آپہنچی

یہ آنسو کہہ رہے ہیں کچھ مری ویراں نگاہوں سے
دمِ آخر کمالِ بے زباں تک بات آپہنچی

کہاں لائے تمھیں کامیؔ! وصال و ہجر کے نالے
جنونِ بیخودی! آہ و فغاں تک بات آپہنچی

تعارف: Admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

شکن شکن جو مہکنے لگی ہے بستر کی: یہ اُس کے لمس کا،اُس گل بدن کا جادو ہے

ڈاکٹر نبیل احمد نبیل غزل کسی گلاب نہ صحنِ چمن کا جادو ہے یہ رنگ ...