بنیادی صفحہ » پاکستان » ضیاءالدین یونیورسٹی کے سولہویں کانووکیشن کی پر وقار تقریب

ضیاءالدین یونیورسٹی کے سولہویں کانووکیشن کی پر وقار تقریب

ضیاءالدین یونیورسٹی کے سولہویں کانووکیشن کی پر وقار تقریب
572 طلبہ کو اسناد تقویض کی گئیں

کراچی، 26 اپریل 2019 : ضیاالدین یونیورسٹی کے سولہویں جلسہ تقسیم اسناد کی تقریب میں مختلف شعبوں کے 572 طالب علموں کو اسناد تفویض کی گئیں۔ تقریب میں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ آف پاکستان سلیم مانڈوی والا نے بحیثیت مہمانِ خصوصی شرکت کی۔

اس موقع پر شعبہ بائیوکیمسٹری سے تعلق رکھنے والی ڈاکٹر ظل رباب کو پی ایچ ڈی کی ڈگری عطا کی گئی جبکہ نمایاں کارکردگی دکھانے والے 9 طلبہ و طالبات میں گولڈ میڈل بھی تقسیم کیے گئے۔ جن میں کشف عقیل زیدی( ایم بی بی ایس)، فاطمہ باندے( بی ڈی ایس)، کرن یامین ( ڈی پی ٹی) ، سارہ عباس مرچنٹ، ( میڈیکل ٹیکنالوجی)، مبین اسلم ( نرسنگ) مریم یونس ( بائیو میڈیکل انجنئیرنگ)، حافظہ لاریب عبدلملک (فارم ڈی)، شرمین پٹیل ( میڈیا سائینسز)، مہک الطاف ( اسپیچ لینگوئج تھراپی) شامل ہیں ۔

تقریب کے مہمان خصوصی ڈپٹی چیئرمین سینٹ آف پاکستان سلیم مانڈوی والا نے جلسہ تقسیم اسناد سے خطاب کرتے ہوئے طالب علموں کے ساتھ ساتھ اساتذہ اور والدین کو بھی مبارکباد پیش کی اورکہا کہ مجھے پورا یقین ہے کہ آج یہاں سے گریجوئٹ ہونے والے طلبہ و طالبات معاشرے کی ترقی میں مثبت کردار ادا کریں گے۔ ا نہوں نے مزید کہا کہ تعلیم اور تربیت کی فراہمی کے لحاظ سے ضیاءالدین یونیورسٹی نہایت معتبر ادارہ ہے کیونکہ یہاں معیار پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جاتا۔ ضیاءالدین یونیورسٹی اعلیٰ تعلیم کے میدان میں نمایاں خدمات انجام دے رہی ہے اور اس میں مزید شعبہ جات کے اضافے سے طالب علموں کو معیاری تعلیم کے حصول کے مزید مواقع میسر آئیں گے۔

ڈگری حاصل کرنے والے تمام طلبہ و طالبات کی کوششوں کو سراہتے ہوئے سلیم مانڈوی والا کا کہنا تھا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ ہمارے ملک سے تعلیم حاصل کر کے جانے والے ذہین نو جوان دنیا بھر میں اپنی ذہانت کے بل بوتے پر نہ صرف پاکستان کا نام روشن کر رہے ہیںبلکہ مختلف شعبہ جات میں جدید تقاضوں کے مطابق اپنی خدما ت بھی سر انجام دے رہے ہیں۔ اعلیٰ تعلیم ہی ہمارے تمام مسائل کا حل ہے کیونکہ اس کے بغیر کو ئی بھی معاشرہ ترقی نہیں کرسکتا یہی وجہ ہے کہ اعلی تعلیم کا فروغ حکومت کی اولین ترجیح ہے۔

اس موقع پر مزید انہوں نے کہا کہ آج کے دور میں بہت سی ایسی جدید ٹیکنالو جیز متعارف کروائی گئیں ہیں جن کا آج سے بیس برس پہلے کوئی نام و نشاں تک نہیں تھا۔ یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ ہمیں اگر ترقی کرنی ہے تو وقت کے ساتھ چلنا ہو گا اور ایک کامیاب پیشہ ور انسان بننے اور زندگی میں آگے بڑھنے کے لیئے شدید ضروری ہے کہ وہ سیکھنے کے عمل کو ہمیشہ جاری رکھے اور اسے کبھی ترک نہ کرے۔

اس موقع پر ضیاءالدین یونیورسٹی کے چانسلر ڈاکٹر عاصم حسین نے گریجوئٹ ہونیوالے طلبہ و طالبات کے ساتھ ساتھ ان کے والدین اور اساتذہ کو تہہ دل سے مباکباد پیش کی اور کہا کہ آپ سب خاص طور پر مباکباد کے مستحق ہیں کیونکہ آپ کی مدد ، رہنمائی اور بھرپور تعاون سے ہی یہ نوجوان آج اپنی منزل پا لینے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

ڈگریاں حاصل کرنے واے طلبہ و طالبات کو مخاظب کرتے ہوئے ڈاکٹر عاصم حسین کا کہنا تھا کہ آپ تمام طلبہ و طالبات گذشتہ چند برسوں سے ضیاالدین یونیورسٹی سے وابستہ رہے ہیں او ر یہ آپ کی محنت اور سخت جدوجہدکا ہی نتیجہ ہے کہ آ ٓج آپ تمام نوجوانوں نے اپنی خوابوں کی تعبیر پا لی ہے مجھے آپ سب پر بے حد فخر ہے۔ اور میں انتہائی یقین کے ساتھ یہ کہہ سکتا ہوں اب آپ لوگ اپنے اپنے شعبہ جات میں مکمل مہارت حاصل کرچکے ہیں اور ملک کی خدمت کرنے کے لیئے ذہنی طور پر مکمل تیا ر ہو چکے ہیں ۔

کراچی ایجوکیشن سٹی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے ڈاکٹر عاصم حسین کا کہنا تھا کہ ضیاالدین یونیورسٹی وہ واحد یونیورسٹی ہے جس نے پچھلے برس ہی ایجوکیشن سٹی میں فیکلٹی آف انجینئرنگ سائنسسز اینڈ ٹیکنالوجی بلڈنگ میں تدریسی عمل کا آغاز کردیا تھا اور مزید اس سال فارمیسی بلاک سردار ےاسین ملک کا سنگ بنیاد بھی رکھ دیا گیا ہے۔ انہوں نے ایجوکیشن سٹی ضیاءالدین یونیورسٹی کیمپس میں تدریسی عمل کے آغاز کو سراہتے ہوئے کہا کہ ہمارے اس عمل سے ایجوکیشن سٹی میں دیگر تعلیمی اداروں کی جلد از جلد فعالیت میں مدد ملے گی۔

اس موقع پر چانسلر ڈاکٹر عاصم حسین نے بتایا کہ ضیاالدین یونیورسٹی نے مزید تین نئی فیکلٹیز متعارف کروائی ہیں جن میں فیکلٹی آف لائ، فیکلٹی آف ایسٹرن میڈیسن اینڈ نیچرل سائینسسز ، اور فیکلٹی آف لبرل آرٹس اینڈ ہیومن ساینسسز شامل ہیں۔ علم کی شمع کو مزید پھیلانے کے لیئے ضیاالدین یونیورسٹی کی جانب سے میٹرک اور انٹر کے لیئے ضیاالدین یونیورسٹی امتحانی بورڈ کا بھی آغاز کردیا گیا ہے۔

ڈاکٹر عاصم حسین کا کہنا تھا کہ ضیاءالدین یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہونے والے طلباءو طالبات ہر شعبہ زندگی میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ یونیورسٹی میں جدید تقاضوں کے مطابق نصابی مواد کے استعمال کو سراہتے ہوئے کہا انکا کہنا تھا کہ اس کے ذریعہ طالب علموں کو اپنی صلاحیتوں کے بہتر اظہار کے ساتھ ساتھ روزگار کے مواقعوں کی فراہمی بھی ممکن ہورہی ہے

ڈاکٹر پیرزادہ قاسم نے فارغ التحصیل ہونے والے طلبا اور ان کے والدین کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے ان کے روشن مستقبل کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ آپ کو فخر ہونا چاہئے کہ آپ کا تعلق ملک کی بہترین جامعہ سے ہے۔ مجھے امید ہے کہ آپ اپنی بہترین پیشہ ورانہ صلا حیتوں کو بروئے کار لائیں گے۔ انہوں نے طالب علموں کو تلقین کرتے ہوئے کہا کہ آپ ایک انتہائی معتبر پیشے سے وابستہ ہوچکے ہیں اس لیے اپنی پیشہ وارانہ اخلاقیات کو ہمیشہ مدنظر رکھیں اور بلا امتیاز مذہب، قومیت، سیاست اور سماجی رتبے کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنی خدمات انجام دیں۔

 

تعارف: Admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*

x

Check Also

گورنر پنجاب چوہدری سرور کی استعفی طلب کیے جانے کی خبروں کی تردید

پاکپتن Oc گورنر پنجاب چوہدری سرور نے پاکپتن پہنچ کر دربار بابا فرید پر حاضری ...